Thursday, September 22, 2022
Google search engine
HomeWorld Elephant Day - سفید سونا جس نے ہاتھیوں کی زندگی خطرے...
Array

World Elephant Day – سفید سونا جس نے ہاتھیوں کی زندگی خطرے میں ڈال دی


اردو زبان میں ایک کہاوت ہے، ہاتھی زندہ ہو تو لاکھ کا، مرا ہوا ہو تو سوا لاکھ کا۔ یہ جملہ عموماً کسی انسان، مقام یا شے کی قدر و قیمت کو ظاہر کرنے کے لیے کہا جاتا ہے، لیکن ہاتھی کے پاس ایسا کیا ہے جس نے اسے اس قدر بیش قیمت جانور بنا دیا ہے؟

ہاتھی کو یہ دولت اس کے لمبے دانتوں کی صورت میں حاصل ہے، ہاتھی دانت جسے سفید سونا بھی کہا جاتا ہے دنیا کی بیش قیمت ترین دھاتوں میں سے ایک ہے اور عالمی مارکیٹ میں اس کی قیمت کوکین یا سونے سے بھی کہیں زیادہ ہے۔

اور اسی قیمتی دولت نے ہاتھی کی نسل کو خطرات لاحق کردیے۔

ہاتھیوں کی حفاظت کے بارے میں آگاہی کے لیے آج 12 اگست کو ہاتھی کا دن منایا جارہا ہے، اس دن کو منانے کا آغاز سنہ 2012 میں کیا گیا۔

ہاتھی دانت جسے زیورات، مجسمے اور آرائشی اشیا بنانے میں استعمال کیا جاتا ہے، خوبصورت اور شفاف ہونے کی وجہ سے نہایت مہنگا ہے اور دولت مند افراد اسے منہ مانگے داموں خریدنے کے لیے تیار رہتے ہیں۔

براعظم افریقہ ہاتھی دانت کی فراہمی کا اہم مرکز رہا جہاں غربت اور ہاتھیوں کی بہتات کی وجہ سے ہاتھی دانت کی خرید و فروخت سہل ترین کاروبار بنتی چلی گئی، اس کا نتیجہ یہ نکلا کہ ہاتھیوں کی تعداد خطرناک حد تک گھٹ گئی۔

ورلڈ وائلڈ لائف فنڈ (ڈبلیو ڈبلیو ایف) کے مطابق صرف ایک صدی قبل افریقہ میں 1 کروڑ جبکہ ایشیا میں 1 لاکھ ہاتھی موجود تھے، لیکن اب ان کی تعداد تشویش ناک حد تک کم ہوچکی ہے۔

سال 2021 تک جمع کیے گئے اعداد و شمار کے مطابق دنیا بھر میں اب صرف 5 لاکھ ہاتھی ہی بچے ہیں جن میں سے 4 لاکھ 15 ہزار ہاتھی افریقہ اور تقریباً 40 ہزار ایشیا میں موجود ہیں۔

ماہرین کے مطابق ہاتھی دانت کی قانونی و غیر قانونی تجارت ہاتھیوں کی بقا کے لیے شدید خطرہ بن گئی تھی اور یہ نہ صرف ہاتھیوں کی نسل کو ختم کر سکتی تھی بلکہ اس سے حاصل ہونے والی رقم غیر قانونی کاموں میں بھی استعمال کی جارہی تھی۔

ہاتھی دانت کی غیر قانونی تجارت کو کئی عالمی جرائم پیشہ منظم گروہوں کی سرپرستی بھی حاصل رہی۔

ایک اندازے کے مطابق افریقہ میں ہر سال ہاتھی دانت کے حصول کے لیے 40 ہزار ہاتھیوں کا شکار کیا جاتا رہا۔

ہاتھی دانت کی تجارت کے لیے کچھ عرصہ قبل تک چین اور امریکا دنیا کی 2 بڑی مارکیٹیں سمجھی جاتی تھیں، دنیا بھر میں جمع کیا جانے والا ہاتھی دانت کا 50 سے 70 فیصد حصہ چین میں اسمگل کیا جاتا تھا۔

تاہم ہاتھی کی نسل کو لاحق خطرات دیکھتے ہوئے دنیا بھر میں ہاتھی دانت کی تجارت کے خلاف سخت اقدامات کیے گئے، اس حوالے سے افریقی ممالک کی کوششیں قابل ذکر ہیں جن کی سیاحت جنگلی حیات پر مشتمل ہے اور ہاتھی اس کا ایک اہم حصہ ہے۔

سنہ 2015 میں افریقہ میں ایک ’جائنٹ کلب فورم‘ بھی بنایا گیا جس کے پہلے ہی اجلاس میں افریقی رہنماؤں، تاجروں اور سائنسدانوں نے دنیا بھر میں ہاتھی دانت کی تجارت پر مکمل پابندی عائد کرنے کا مطالبہ کیا۔

خود افریقی ممالک میں بھی ہاتھی سمیت دیگر جنگلی حیات کے شکار پر سخت سزائیں متعارف کروا دی گئیں، سنہ 2018 میں چین نے جرات مندانہ قدم اٹھاتے ہوئے ملک میں چلنے والی ہاتھی دانت کی تمام مارکیٹس بند کرنے کا اعلان کردیا اور ملک میں ہاتھی دانت کی تجارت کو غیر قانونی قرار دے دیا۔

سنگا پور اور ہانگ کانگ نے بھی ہاتھی دانت کی تجارت پر پابندی لگا دی تاہم امریکا، برطانیہ، جاپان اور تھائی لینڈ میں اب بھی قانونی طور پر سفید سونے کی تجارت جاری ہے۔

Comments





Source link

RELATED ARTICLES

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -
Google search engine

Most Popular

Recent Comments

Maria on Woo Ninja
Maria on Premium Quality
Maria on Woo Logo
Maria on Ninja Silhouette
Maria on Ship Your Idea
Maria on Woo Ninja
Maria on Woo Single #2
Maria on Happy Ninja
Maria on Happy Ninja
Ryan on Ship Your Idea
Stuart on Ship Your Idea
Stuart on Ship Your Idea
Stuart on Happy Ninja
Stuart on Flying Ninja
Coen Jacobs on Woo Album #3
Coen Jacobs on Woo Album #4
Coen Jacobs on Ninja Silhouette
Coen Jacobs on Flying Ninja
student on Ninja Silhouette
Magnus on Woo Logo
Magnus on Patient Ninja
Cobus Bester on Woo Single #2
Cobus Bester on Woo Ninja
Andrew on Premium Quality
Cobus Bester on Woo Logo
Andrew on Flying Ninja
Cobus Bester on Woo Album #2
Cobus Bester on Ship Your Idea
Andrew on Happy Ninja
Cobus Bester on Ninja Silhouette
Cobus Bester on Premium Quality
Cobus Bester on Patient Ninja
Cobus Bester on Flying Ninja
James Koster on Patient Ninja
James Koster on Woo Album #4
James Koster on Ship Your Idea