Saturday, September 17, 2022
Google search engine
HomeWomen Rights - خواتین پر تشدد کے خاتمے اور انصاف کی فراہمی...
Array

Women Rights – خواتین پر تشدد کے خاتمے اور انصاف کی فراہمی میں مزید ڈھائی سو سال لگیں گے


اقوام متحدہ کا کہنا ہے کہ ایسی دنیا جہاں خواتین کو مکمل یکساں حقوق حاصل ہوں، ایسی دنیا کی تشکیل میں تقریباً ڈھائی سو سال درکار ہیں، رواں برس کے اواخر تک تقریباً 38 کروڑ 30 لاکھ خواتین اور لڑکیاں انتہائی غربت میں چلی جائیں گی۔

بین الاقوامی ویب سائٹ کے مطابق اقوام متحدہ کی ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ مختلف حالیہ بحرانوں کے سبب دنیا میں صنفی تفریق کی وجہ سے پائی جانے والی خلیج مزید وسیع ہوگئی ہے۔

رپورٹ کے مطابق اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے اس وقت جس رفتار سے پیش رفت ہو رہی ہے، اس کی بنیاد پر یہی کہا جا سکتا ہے کہ مکمل صنفی مساوات کے حصول میں عالمی برادری کو ابھی مزید تین صدیاں لگ جائیں گی۔

یہ رپورٹ اقوام متحدہ کے ذیلی ادارے یو این ویمن نے تیار کی ہے اور اس ادارے کا کہنا ہے کہ صنفی مساوات کے حصول کے حوالے سے جو کوششیں کی جا رہی ہیں، ان میں پیش رفت کی موجودہ شرح کے مطابق قانونی تحفظ کی راہ میں حائل خلیج عبور کرنے اور تفریق آمیز قوانین کو ختم کرنے میں ابھی 286 برس لگیں گے۔

اس کے علاوہ روزگار کی جگہوں پر اختیارات اور قیادت کے لحاظ سے مساوی نمائندگی کے لیے بھی خواتین کو ابھی 140 برس انتظار کرنا پڑے گا جبکہ قومی پارلیمانی اداروں میں مساوی نمائندگی کے حصول میں بھی مزید کم از کم 40 برس لگیں گے۔

اس رپورٹ میں صنفی مساوات کے حوالے سے مستقبل بعید کے جن امکانات کا ذکر کیا گیا ہے، وہ اقوام متحدہ کے پائیدار ترقی کے اہداف یا ایس ڈی جیز کے تحت سن 2030 تک عالمگیر صنفی مساوات کے حصول کے لیے مقررہ وقت سے تو بہت ہی دور ہیں۔

یو این ویمن نے یہ رپورٹ اقوام متحدہ کے محکمہ اقتصادیات اور سماجی امور کے ساتھ مل کر تیار کی ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ عالمی چیلنجز مثلاً کووڈ 19 کی وبا اور اس کے بعد کے حالات، پرتشدد تصادم، ماحولیاتی تبدیلیوں اور خواتین کے خلاف جنسی حملوں نیز ان کی صحت اور بار آوری اور حقوق کے نظرانداز کیے جانے کی وجہ سے پیدا شدہ صنفی مساوات کی خلیج مزید وسیع ہوگئی ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ رواں برس کے اواخر تک تقریباً 38 کروڑ 30 لاکھ خواتین اور لڑکیاں انتہائی غربت میں چلی جائیں گی اور انہیں یومیہ 1.90 امریکی ڈالر کے برابر مالی وسائل میں ہی گزر بسر کرنا پڑے گی۔

اس کے مقابلے میں انہی حالات کا شکار مردوں اور لڑکوں کی تعداد تقریباً 36 کروڑ 80 لاکھ ہوگی۔

سنہ 2021 کے اواخر تک 44 ملین خواتین اور لڑکیوں کو جبراً بے گھر کر دیا گیا تھا، جو اب تک کی سب سے بڑی تعداد ہے۔ اس کے علاوہ بچہ پیدا کرنے کی عمر والی 1.2 ارب سے زیادہ خواتین اور لڑکیاں ایسے ممالک میں رہ رہی ہیں، جہاں اسقاط حمل کے امکانات تک رسائی پر بھی پابندی ہے۔

یو این ویمن کی ایگزیکٹیو ڈائریکٹر سیما باہوس کا کہنا تھا کہ اگر ہم ترقی چاہتے ہیں اور اس کی رفتار بھی تیز کرنا چاہتے ہیں، تو خواتین اور لڑکیوں کی ترقی کے لیے فوری سرمایہ کاری کرنا انتہائی اہم ہے۔

انہوں نے ایک بیان میں کہا کہ اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ آمدنی، تحفظ، تعلیم اور صحت جیسے امور میں عالمی بحرانوں نے خواتین کی حالت مزید ابتر کر دی ہے۔ اس رجحان کو بدلنے میں ہمیں جتنا زیادہ وقت لگے گا، ہمیں اس کی اتنی ہی زیادہ قیمت ادا کرنا پڑے گی۔

Comments





Source link

RELATED ARTICLES

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -
Google search engine

Most Popular

Recent Comments

Maria on Woo Ninja
Maria on Premium Quality
Maria on Woo Logo
Maria on Ninja Silhouette
Maria on Ship Your Idea
Maria on Woo Ninja
Maria on Woo Single #2
Maria on Happy Ninja
Maria on Happy Ninja
Ryan on Ship Your Idea
Stuart on Ship Your Idea
Stuart on Ship Your Idea
Stuart on Happy Ninja
Stuart on Flying Ninja
Coen Jacobs on Woo Album #3
Coen Jacobs on Woo Album #4
Coen Jacobs on Ninja Silhouette
Coen Jacobs on Flying Ninja
student on Ninja Silhouette
Magnus on Woo Logo
Magnus on Patient Ninja
Cobus Bester on Woo Single #2
Cobus Bester on Woo Ninja
Andrew on Premium Quality
Cobus Bester on Woo Logo
Andrew on Flying Ninja
Cobus Bester on Woo Album #2
Cobus Bester on Ship Your Idea
Andrew on Happy Ninja
Cobus Bester on Ninja Silhouette
Cobus Bester on Premium Quality
Cobus Bester on Patient Ninja
Cobus Bester on Flying Ninja
James Koster on Patient Ninja
James Koster on Woo Album #4
James Koster on Ship Your Idea