کمرہ عدالت میں پی ٹی آئی وکلاء اور خاور مانیکا کی تلخ کلامیجج فیصلہ سنائےبغیر چلے گئے

(حاشر احسن)اسلام آباد کی ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن عدالت میں سابق وزیر اعظم عمران خان اور ان کی اہلیہ بشریٰ بی بی کی عدت میں نکاح کیس کے خلاف اپیلوں  پر سماعت ،کمرہ عدالت میں پی ٹی آئی وکلاء اور خاور مانیکا کی تلخ کلامی،جج فیصلہ سنائےبغیر چلے گئے ۔
اسلام آباد کی ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن کورٹ دوران عدت نکاح کیس میں بانی پی ٹی آئی عمران خان اور ان بشریٰ بی بی کی اپیلوں پر سماعت کے دوران  کمرہ عدالت میں پی ٹی آئی وکلاءاور خاورمانیکا کے درمیان شدید تلخ کلامی ہوئی ہے،عدت نکاح کیس میں پی ٹی آئی وکلا نعیم پنجوتھا، خالد یوسف اور دیگر پیش ہوئے جبکہ کہ بشریٰ بی بی کے سابق شوہرخاورمانیکا بھی کمرہ عدالت میں آئے۔

سماعت کے آغاز پر جج نے خاور مانیکا کے وکیل رضوان عباسی سے دریافت کیا کہ آپ نے دو نقاط پر دلائل دینا تھے؟بعد ازاں رضوان عباسی کی جانب سے اعلٰی عدلیہ کے فیصلے عدالت میں جمع کروائے گئے۔

میں بتانا چاہتا ہوں گا کہ میں کس دکھ سے گزر رہا ہوں،خاور مانیکا 

دوران سماعت خاور مانیکا نے عدالت کو بتایا کہ مجھے کچھ کہنے کے لیے 10 منٹ دیے جائیں، میں بتانا چاہتا ہوں گا کہ میں کس دکھ سے گزر رہا ہوں۔جس پر جج شاہ رخ ارجمند نے ریمارکس دیے کہ اپنے وکیل سے کہیں کہ آپ کی بات بتائیں،جس پر خاورمانیکا نے کہا کہ میرے احساسات میرا وکیل نہیں بتا سکتا،خاور مانیکا نے اصرار کرتے ہوئے پھر کہا کہ مجھے معلوم ہے کیا فیصلہ ہونا ہے،جس پر وکیل پی ٹی آئی  عثمان گل نے کہا کہ خاور مانیکا عدالت کی کارروائی کو متاثر کررہے ہیں، انہیں توہین عدالت کا نوٹس جاری کریں،اس کے بعد خاورمانیکا نے کہا کہ میں تم سے بات نہیں کررہا، عدالت سے کر رہا ہوں، جس نعیم پنجوتھا نے کہا کہ خاور مانیکا صرف عدالتی کارروائی میں تاخیر چاہتے ہیں۔

خاورمانیکا نے کہا کہ میں دیہات سے تعلق رکھتا ہوں، میری بیٹی کا سوشل میڈیا پر جعلی طلاق نامہ بنایا گیا، میں غریب آدمی ہوں، میری سن لیں، خاورمانیکا کے جملے پر پی ٹی آئی کارکنان نے نعرے بازی کی۔

خاورمانیکا نے اپنی بات جاری رکھی اور کہا کہ میرےپاس جہانگیرترین کے پیغامات ہیں کہ اب سب ختم ہوچکا ہے، میں سب پیغامات عدالت میں دکھا سکتاہوں، قسم کھاتا ہوں بچوں کو پہلے نکاح کا معلوم نہیں تھا۔

کمرہ عدالت میں پی ٹی آئی وکلاء خاورمانیکا کے درمیان شدید تلخ کلامی

اس دوران پی ٹی آئی وکلا کی جانب سے مبینہ گالیاں نکالنے پرخاورمانیکا نے کہا کہ ’تمیزمیں رہو، مجھے گالیاں دی گئیں، عثمان گِل نےکہا کہ عدالت سے اٹھاکرباہرپھینک دوںگا،سیشن جج شاہ رخ ارجمند کی خاورمانیکا کو ہدایت کی  کہ کیس پر واپس آئیں، خاور مانیکا نے کہا کہ  گزشتہ چار سال سے اسلامی سوسائٹی تباہ ہوگئی ہے، قدرت کی طرف سے بانی پی ٹی آئی کی پکڑ ہورہی ہے۔ بانی پی ٹی آئی نے بچوں کو دھوکادیا، فساد کے علاوہ کچھ نہیں کیا۔

لعنت ہوبانی پی ٹی آئی کے ایمان پر،خاورمانیکا کی عدالت میں بددعائیں

خاورمانیکا نے کہا کہ لعنت ہوبانی پی ٹی آئی کے ایمان پر، بانی پی ٹی آئی کوقرآن کا کچھ معلوم نہیں، نکاح چھپ کرکیا تومعلوم ہوا بانی پی ٹی آئی نے اللہ کے نام پردھوکا دیا۔خاورمانیکا نے کہا کہ بانی پی ٹی آئی توعورتوں کوچھوڑتے ہی نہیں ہیں، خاورمانیکا کے جملے پرکارکنان کی نعرے بازی شروع کردی، سیشن جج شاہ رخ ارجمند نے خاورمانیکا کو ہدایت  کی کہ  آپ کے پوائنٹ لکھ لیے، مجھے کچھ اور پوائنٹ بتائیں۔خاور مانیکا نے کہا کہ بانی پی ٹی آئی نے سوسائٹی کو تباہ کردیا، بہنیں بیٹیاں والدین کے خلاف ہوگئیں۔

خاورمانیکا کمرہ عدالت میں آبدیدہ ہوگئے

خاورمانیکا کمرہ عدالت میں آبدیدہ ہوگئے اور کہا کہ جب بچوں کو بتایاکہ مجھے طلاق ہوگئی تو بچے بہت روئے، میری ماں دکھ سے وفات پا گئی، اللہ و رسولﷺ کے نام پر بانی پی ٹی آئی نے دھوکا دیا، چار سال تک کسی نے نہیں پوچھا آپ کا مسلہ تو نہیں ہوا۔

خاورمانیکا نے کہا کہ سب نے کاموں کیلئے مجھ سے رابطہ کیا، پرویز الہی اپنے بچے کے کام کے لیے میرے پاس آیا، میری بیٹی کوطلاق ہوگئی ہے، گھرسے فارغ ہوکربیٹھی ہے، بشریٰ بی بی کہتی میرے لیے میرے بچے مرگئے۔

خاور مانیکا کا بانی پی ٹی آئی کے لیے نامناسب الفاظ کا استعمال  پر پی ٹی آئی کارکنان کی جانب سے شدید غصے کا اظہار  کیاگیا۔

حد میں رہ کر بات کریں:جج کی خاور مانیکا کو ہدایت

عدالت نے خاور مانیکا کو کیس کی حد تک بات کرنے کی ہدایت دی،خاور مانیکا نے کہا کہ  اللہ نے قرآن پاک میں لکھا ہے کہ طلاق کے بعد عدت پوری کرو،طلاق سے متعلق 31 جنوری 2018 کو میں نے اپنے بچوں کو بتایا،18 فروری کو نکاح کرتے تو وہ جائز نکاح تھا ، انہوں نے یکم جنوری کو نکاح کرکے خدا کو بھی دھوکا دیا۔

خاورمانیکا نے آبدیدہ ہوتے ہوئے کہا کہ  بشریٰ بی بی کہتی میرے بچے مر گئے میرے لیے، خاورمانیکا کی بانی پی ٹی آئی کو کمرہ عدالت میں ہاتھ اٹھا کر بددعائیں، خاور مانیکا  نے عدالت پر عدم اعتماد اکا اظہار کرتے ہوئے  کیس کسی اور عدالت کو ٹرانسفر کرنے کی استدعا کردی،سیشن جج شاہ رخ ارجمند  نے کہا کہ  عدم اعتماد کی درخواست پہلے بھی خارج ہو چکی ہے،اس موقع پر خاور مانیکا نے کہا کہ بھاڑ میں جائے عمران خان۔

میں آپ سے فیصلہ نہیں کروانا چاہتا،خاورمانیکا کا سیشن جج سے مکالمہ 

سیشن جج نے ان کو ہدایت دی کہ آپ کو جو بتانا ہے اپنے وکیل کو بتا دیں، اس پر خاور مانیکا نے جج سے کہا کہ میں آپ سے فیصلہ نہیں کروانا چاہتا، جج نے دریافت کیا کہ اس کی وجہ کیاہے؟خاورمانیکا نے بتایا کہ مجھے نہیں معلوم مگر بانی پی ٹی آئی نے پچھلی عدالتوں میں بھی ایسا ہی کیا، سیشن جج شاہ رخ ارجمند نے ریمارکس دیے کہ ایک بات چیت ہوتی، کچھ ٹھوس وجہ ہے تو بتائیں؟ خاور مانیکا نے کہا کہ عمران خان سوشل میڈیا پر لوگوں کے ذہنوں سے کھیل رہے ہیں، سیشن جج شاہ رخ ارجمند کا کہنا تھا کہ ہر انسان تو سوشل میڈیا نہیں دیکھتا۔

خاور مانیکا نے کمرہ عدالت میں پی ٹی آئی کارکنان کی نقل اتارتے ہوئے کہا کہ جج بیٹھے ہوئے ہیں اور پی ٹی آئی والے ناچ رہے، ان کی بات پر کمرہ عدالت میں قہقہے لگ گئے۔سیشن جج شاہ رخ ارجمند نے ریمارکس دیے کہ کسی نہ کسی جج نے تو فیصلہ کرنا ہے نا، رضوان عباسی سے مشاورت کرکے بتا دیں آپ چاہتےکیا ہیں؟

بعد ازاں عمران خان کے وکیل نے عدالت میں دلائل دیے کہ خاور مانیکا نے جذباتی بیانات دیے، کچھ لیگل دلائل نہیں دیے۔اس پر خاور مانیکا نے وکیل سے مکالمہ کیا کہ اللہ کرے تمہارے گھر کے ساتھ ایسا ہی ہو، خاور مانیکا نے چیئرمین پی ٹی آئی گوہر علی سے مکالمہ کیا کہ تم لوگ جانتے بھی نہیں عمران خان کو، اللہ کا خوف کھاؤ۔

اس دوران خاور مانیکا اور عثمان گِل کے درمیان پھر شدید تلخ کلامی ہوئی۔سیشن جج شاہ رخ ارجمند بغیر فیصلہ سنائے عدالت سے چلے گئے۔

Leave a Comment