نیب کا گندم اور چینی بحران کی تحقیقات کا فیصلہ

0
18


اسلام آباد: قومی احتساب بیورو (نیب) نے ملک میں حالیہ گندم اور چینی بحران کو میگا پرائم اسکینڈل قرار دیتے ہوئے تحقیقات کا فیصلہ کیا ہے۔

نیب کی جانب سے جاری اعلامیے کے مطابق چیئرمین نیب جسٹس (ر) جاوید اقبال کی زیرصدارت ایگزیکٹو بورڈ کا اجلاس ہوا جس میں گندم اور چینی پرائم میگا اسکینڈل کی تحقیقات کا فیصلہ کیا گیا۔

اعلامیے میں کہا گیاہےکہ گندم چینی میگا اسکینڈل کے تمام پہلوؤں کی تحقیقات ہوں گی،  اسکینڈل میں اربوں روپے کی ڈکیتی اور قیمتوں میں اضافے کی تحقیقات ہوں گی، گندم چینی اسکینڈل میں اسمگلنگ اور سبسڈی کی بھی تحقیقات ہوں گی۔

اعلامیے کے مطابق ایگزیکٹو بورڈ نے سابق اٹارنی جنرل ملک قیوم کے خلاف انکوائری عدم شواہد پربند کرنے کی منظوری دی جب کہ نجکاری کمیشن کےافسران و  اہلکاروں اور  انٹیریئرایمپلائز ہاؤسنگ سوسائٹی کی منیجنگ کمیٹی کے خلاف انکوائری بھی بند کرنے کی منظوری دی گئی۔

اعلامیے میں بتایا گیا ہےکہ نیب ایگزیکٹو اجلاس میں 2 انکوائریوں کی منظوری دی گئی جن میں پاکستان پیٹرولیم کے خلاف میگا کرپشن اور سی ڈی اے و نجی ہاؤسنگ سوسائٹی کیخلاف انکوائری کی منظوری دی گئی۔

ایف آئی اے رپورٹ میں انکشاف

خیال رہےکہ ایف آئی اے نے چینی اور گندم کے بحران پر رپورٹ وزیراعظم کو پیش کردی ہے۔

ایف آئی اے کی رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ ملک میں چینی بحران کاسب سے زیادہ فائدہ حکمران جماعت کے اہم رہنما جہانگیر ترین نے اٹھایا، دوسرے نمبر پر وفاقی وزیر خسرو بختیار کے بھائی اور تیسرے نمبر پر حکمران اتحاد میں شامل مونس الٰہی کی کمپنیوں نے فائدہ اٹھایا۔

تحقیقاتی رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ وفاقی اور صوبائی حکومتوں کی نااہلی آٹا بحران کی اہم وجہ رہی۔

وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ وہ اعلیٰ سطح کے کمیشن کی جانب سے مفصل فرانزک آڈٹ کا انتظار کررہے ہیں جو 25 اپریل تک کرلیا جائے گا۔

ان کا کہنا ہے کہ ان نتائج کے سامنے آنے کے بعد کوئی بھی طاقتور گروہ (لابی) عوامی مفادات کا خون کر کے منافع سمیٹنے کے قابل نہیں رہے گا۔

دوسری جانب جہانگیر ترین نے چینی بحران پر اپنے اوپر عائد الزامات کی تردید کرتے ہوئے کہا ہےکہ رپورٹ انتقامی کارروائی ہے اور اس میں وزیراعظم کے سیکریٹری ملوث ہیں۔





Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here