سندھ ہائیکورٹ نے ایک سے 15 گریڈ کی 54 ہزار بھرتیوں کو کالعدم قرار دے دیا

سندھ ہائیکورٹ نے ایک سے 15 گریڈ کی 54 ہزار بھرتیوں کو کالعدم قرار دے دیا

سندھ ہائیکورٹ نے ایک سے 15 گریڈ کی 54 ہزار بھرتیوں کو کالعدم قرار دے دیا، اگست 2023 کے اشتہارات کے مطابق کی گئی بھرتیوں کے خلاف متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) نے درخواست دائر کی تھی۔

ایم کیو ایم کی درخواست کی سماعت جسٹس ظفر احمد راجپوت نے چیمبر میں کی، درخواست پر ایم کیو ایم کے وکیل فروغ نسیم اور ایڈووکیٹ جنرل سندھ نے دلائل دیے۔

عدالت نے اپنے حکمنامے میں کہا کہ مستقبل میں واک ان انٹرویو کی بنیاد پر بھرتیاں نہیں کی جائیں گی، سندھ حکومت قوانین کے مطابق نئی بھرتیاں یقینی بنائے، گریڈ ایک سے4 اور 5 سے15 کی پوسٹوں پر بھرتی ضلعی بنیادوں پر کی جائیں۔

ایڈووکیٹ جنرل سندھ نے صوبائی حکومت کی جانب سے  تجویز دیتے ہوئے کہا کہ  بھرتیوں کیلئے ٹیسٹ اور انٹرویو دوبارہ لیے جائیں، سندھ حکومت ملازمتوں کیلئے از سر نو اشتہارات جاری کرے گی۔

Leave a Comment