Monday, February 6, 2023
Online Free Business listing Directory to Grow your Sales
HomeLatest Breaking newsسندھ میں سیاسی جوڑ توڑ، ایم کیو ایم کے دھڑوں کو یکجا...

سندھ میں سیاسی جوڑ توڑ، ایم کیو ایم کے دھڑوں کو یکجا کرنے کی کوششیں


سندھ میں سیاسی جوڑ توڑ، ایم کیو ایم کے دھڑوں کو یکجا کرنے کی کوششیں 1660201 2023911192

ایم کیو ایم پاکستان کے سابق سربراہ ڈاکٹر فاروق ستار نے اردو نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ایم کیو ایم شہدا کی امانت ہے۔ فوٹو: اے ایف پی
پاکستان کے جنوبی صوبہ سندھ میں سال کے اختتام پر سیاسی جوڑ توڑ کا سلسلہ شروع ہو گیا ہے۔ ماضی میں شہری سندھ سے واضح برتری رکھنے والی جماعت متحدہ قومی موومنٹ کے بکھرے دھڑے ایک جگہ جمع ہونے کے لیے ان دنوں سرگرم ہیں۔
گورنر سندھ سے گزشتہ ہفتے ہونے والی اہم رہنماؤں کی ملاقاتوں کے بعد یہ امکان ظاہر کیا جا رہا ہے کہ جلد ہی ایم کیو ایم کے دھڑے ایک پلیٹ فارم پر نظر آئیں گے۔
صوبے میں عام انتخابات سے قبل اتحاد کی باتوں پر ایم کیو ایم کے رہنماؤں کا ماننا ہے تنظیم سے الگ ہونے والوں کی واپسی کا طریقہ کار موجود ہے، جو بھی واپس آنا چاہے گا اس کے لیے دروازے کھلے ہیں۔ رہنماؤں کے مطابق کسی پارٹی سے اتحاد کا ابھی تک فیصلہ نہیں کیا۔
سینیئر صحافی مظہر عباس نے اردو نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ حال ہی میں گورنر سندھ کی ذمہ داریاں سنبھالنے والے کامران ٹیسوری نے ایم کیو ایم کے رہنماؤں سے ملاقاتیں کی ہیں جن کے بعد یہ امکان ظاہر کیا جا رہا ہے کہ جلد ہی ایم کیو ایم کے دھڑے ایک جگہ جمع ہو جائیں گے۔
یاد رہے کہ رواں ماہ گورنر سندھ کامران ٹیسوری نے ایم کیو ایم پاکستان کے سابق سربراہ ڈاکٹر فاروق ستار اور پاکستان سرزمین پارٹی کے چیئرمین و سابق ناظم کراچی سید مصطفی کمال اور صدر انیس قائم خانی سے ملاقاتیں کیں۔
ملاقوں میں سندھ کے شہری علاقوں سمیت دیگر علاقوں کی بہتری کے لیے مل کر کام کرنے پر غور کیا گیا۔
گورنر سندھ کامران ٹیسوری نے ان ملاقوں کے بعد کراچی ایکسپو سینٹر میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ ماضی میں ایم کیو ایم کا حصہ رہنے والے رہنماؤں سے ملاقاتیں ہوئی ہیں۔ ان ملاقاتوں میں صوبے کی بہتری کے لیے بات چیت کی گئی ہے۔ کوشش ہے کہ ایم کیو ایم کے دھڑوں کو جمع کیا جا سکے لیکن اس ضمن میں فیصلہ پارٹی قیادت نے کرنا ہے۔
تجزیہ کار مظہر عباس کا کہنا تھا کہ 1987 میں بلدیاتی انتخابات سے سندھ کے شہری علاقوں کی سیاست میں اپنی حیثیت منوانے والی متحدہ قومی موومنٹ میں تقسیم یوں تو کوئی نئی بات نہیں لیکن ایم کیو ایم اپنے بانی الطاف حسین سے لاتعلقی کے بعد کئی ٹکڑوں میں بٹ گئی ہے۔ کئی عرصے سے ان دھڑوں کو ایک جگہ جمع کرنے کی کوششیں کی جا رہی ہیں۔

ایم کیو ایم میں پہلی تقسیم

مظہر عباس کے مطابق متحدہ قومی موومنٹ میں پہلی تقسیم 1992 میں ہوئی جب آفاق احمد نے موجودہ ایم کیو ایم کے رہنما عامر خان سمیت دیگر کے ساتھ مل کر مہاجر قومی موومنٹ کی بنیاد رکھی۔ ’اس تنظیم کو کوئی خاص کامیابی تو نہیں ملی لیکن آج بھی آفاق احمد اپنی تنظیم سے ہی وابستہ ہیں۔ اس تقسیم کے تقریبا تین دہائیوں بعد ایم کیوایم میں سال 2013 میں تقسیم دیکھنے میں آئی جب سابق ناظم کراچی سید مصطفی کمال اور انیس قائم خانی سے الطاف حسین سے علحیدگی اختیار کی۔‘
سندھ میں سیاسی جوڑ توڑ، ایم کیو ایم کے دھڑوں کو یکجا کرنے کی کوششیں mqm altaf
الطاف حسین کو اگست 2016 میں ایم کیو ایم سے الگ کر دیا گیا تھا۔ فائل فوٹو: اے ایف پی
بعد ازاں 22 اگست 2016 میں الطاف حسین کی ملک مخالف تقریر کے بعد بانی ایم کیو ایم کو ہی ان کی تنظیم سے الگ کر دیا گیا۔ اس علحیدگی کے بعد ایم کیو ایم دھڑے بندی کا شکار ہوئی۔ فاروق ستار پی آئی بی کالونی سے اپنی تنظیم چلاتے نظر آئے تو بہادر آباد سے ایم کیو ایم پاکستان اپنی سیاسی سرگرمیاں سر انجام دینے لگی۔

ایم کیو ایم میں واپسی پر روایات

سینیئر صحافی رفعت سعید کا کہنا ہے کہ ماضی میں ایم کیوایم کی روایت رہی ہے کہ واپسی کرنے والے رہنما اور کارکنان کو پارٹی کے شہید اور اسیر کارکنان کے اہلخانہ سے معافی مانگنی ہوتی تھی۔ موجودہ ایم کیوایم کے اہم رہنما عامر خان بھی جب ایم کیو ایم حقیقی چھوڑ کر سال 2011 میں متحدہ میں شامل ہوئے تھے تو انہوں نے معافی مانگی تھی۔ اور نائن زیرو کے قریب واقع پارک میں ایک تقریب میں الطاف حسین نے ان کی شمولیت کا اعلان کیا تھا۔  

تقسیم کے بعد ایم کیوایم کو سندھ کے شہری علاقوں میں ناکامی

ایم کیو ایم کی تقسیم کے بعد کراچی سمیت سندھ کے شہری علاقوں میں متحدہ کو اپنے مضبوط علاقوں میں شکست کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ سندھ میں بلدیاتی انتخابات کے پہلے مرحلے میں سندھ کے شہری علاقوں سے پیپلز پارٹی نے ان نشستوں پر کامیابی حاصل کی ہے جہاں تین دہائیوں سے ایم کیو ایم کامیابی حاصل کر رہی تھی۔ اس کے علاوہ کراچی میں ہونے والے کئی ضمنی انتخابات میں بھی ایم کیو ایم کی کارکردگی مایوس کن رہی ہے۔
انہوں نے مزید کہا کہ سندھ کے شہری علاقوں میں کامیابی کے لیے ایم کیو ایم کے دھڑے ملنے کی جہاں باتیں ہورہی ہیں وہیں ایم کیوایم کے کئی رہنما ان تمام سرگرمیوں کے خلاف بھی نظر آتے ہیں۔ ایم کیو ایم پاکستان کے رہنما عامر خان گورنر سندھ کی تعیناتی سے ابتک کئی معاملات پر نالاں ہیں۔ ان دنوں وہ تنظیمی معاملات سے دوری اختیار کرتے ہوئے ملک سے باہر ہیں۔  
سندھ میں سیاسی جوڑ توڑ، ایم کیو ایم کے دھڑوں کو یکجا کرنے کی کوششیں mqm sattarpak
سینیئر سیاست دان فاروق ستار بھی بھی گورنر سندھ کامران ٹیسوری سے ملاقات کی ہے۔ فائل فوٹو: اے ایف پی

ایم کیو ایم کے دھڑوں کا اتحاد پر کیا کہنا ہے؟

ایم کیو ایم پاکستان کے رہنما اور وفاقی وزیر سید امین الحق نے اردو نیوز سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ ایم کیوایم پاکستان ایک سیاسی تنظیم ہے۔ اس تنظیم کے رہنما اور کارکنان ماضی میں بھی پارٹی سے علحیدگی اختیار کرکے واپس آتے رہے ہیں۔ اور ابھی بھی اگر پارٹی کا کوئی سیئنر رہنما یا کارکن واپس پارٹی میں شمولیت کا ارادہ رکھتا ہے تو ہم اسے خوش آمدید کہیں گے۔ کچھ عرصہ قبل پارٹی سے الگ ہونے والے کئی رہنماؤں اور کارکنان نے پارٹی سے رابطہ کیا ہے اور ایک بار پھر سے تنظیمی سرگرمیوں کا حصہ بنے ہیں۔ اس وقت وہ کارکنان اور رہنما اہم ذمہ داریوں پر ہیں۔  
سیاسی اتحاد کے سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ ایم کیوایم پاکستان ایک سیاسی جماعت ہے اور پتنگ کے نشان پر انتخابات میں حصہ لے گی۔ فی الوقت سیٹ ایڈجسمنٹ سمیت کوئی فارمولہ طے نہیں ہوا۔ 
ایم کیو ایم پاکستان کے سابق سربراہ ڈاکٹر فاروق ستار نے اردو نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ایم کیو ایم شہدا کی امانت ہے۔ ہم نے ماضی میں اس شہر سمیت سندھ کے شہری علاقوں میں بہتری کے لیے بے مثال کام کیے ہیں۔
ان کا کہنا تھا کہ اس بات میں کوئی دو رائے نہیں کہ ایم کیو ایم کے تقسیم ہونے سے مخالفین کا فائدہ ہوا ہے۔ اور سندھ کے شہری علاقوں سے ایم کیوایم کی نشستیں دیگر جماعتوں کو ملی ہیں۔ فاروق ستار نے کہا کہ اتحاد کی باتیں ابھی تک صرف باتیں ہی ہیں۔ ایم کیو ایم کے سب دھڑے یہ تو سمجھتے ہیں کہ دھڑا بندی سے سب کو نقصان پہنچ رہا ہے۔ لیکن اتحاد کا فارمولا اور مستقبل میں ساتھ چلنے کے طریقے کار میں پیش رفت کو ابھی تک حتمی شکل نہیں دی جا سکی ہے۔
پاکستان سرزمین پارٹی کی ترجمان آسیہ اسحاق نے اردو نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ گورنر ہاؤس میں پی ایس پی کے رہنماؤں کی گورنرسندھ سے ملاقات میں صوبے کے مسائل حل کرنے کے لیے تفصیلی بات ہوئی ہے۔
ان کا کہنا تھا کہ ابھی تک کوئی سیاسی فارمولا طے نہیں ہوا۔ کوئی بھی بات سیاست میں حتمی نہیں ہوتی۔ سب صوبے کی بہتری کے لیے کام کرنا چاہتے ہیں۔ ایم کیو ایم سمیت تمام سیاسی جماعتوں کے لیے ہمارے دروازے کھلے ہیں۔ پی ایس پی ایک منظم سیاسی جماعت ہے۔ ہمارے فیصلے مشاورت سے کیے جاتے ہیں۔ صوبے کی بہتری کے لیے کوئی فارمولہ پیش کیا جائے گا تو پارٹی مشاورت کے بعد فیصلہ کریں گے۔
متحدہ قومی موومنٹ سے سب سے پہلے علحیدگی اختیار کرکے مہاجر قومی موومنٹ بنانے والے آفاق احمد نے اردو نیوز کو بتایا کہ ایم کیوایم کے دھڑوں کو جوڑنے کی خبریں سنی ضرور ہیں لیکن کسی نے ان سے ابھی تک رابطہ نہیں کیا۔





Source link

RELATED ARTICLES

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

Recent Comments