Monday, February 6, 2023
Online Free Business listing Directory to Grow your Sales
HomeLatest Breaking newsجنیوا کانفرنس،’پاکستان میں ہر سات میں سے ایک شخص سیلاب سے متاثر...

جنیوا کانفرنس،’پاکستان میں ہر سات میں سے ایک شخص سیلاب سے متاثر ہے‘


جنیوا کانفرنس،’پاکستان میں ہر سات میں سے ایک شخص سیلاب سے متاثر ہے‘ 1669216 1386206594

فرانس کے صدر ایمانویل میکخواں نے کانفرنس سے ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب کیا۔ فائل فوٹو: اے ایف پی
جنیوا میں اقوام متحدہ کے زیراہتمام پاکستان کے سیلاب متاثرین کے لیے کی مدد کے لیے کانفرنس جاری ہے۔
پاکستان اور اقوام متحدہ سوئٹزرلینڈ کے شہر جنیوا میں پاکستان کی تعمیر نو اور بحالی میں شراکت کے موضوع پر اہم کانفرنس کی میزبانی کر رہے ہیں جس کا مقصد گذشتہ سال کے تباہ کن سیلابوں کے بعد تعمیر نو اور بحالی کے لیے امداد کا انتظام ہے۔
پیر کو کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوتیرس نے بتایا کہ انہوں نے خود پاکستان جا کر سیلاب کی تباہی کا مشاہدہ کیا۔
انہوں نے کانفرنس میں شرکت کرنے والے مہمانوں کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ ترقی پذیر ملک کا بڑا حصہ سیلاب سے متاثر ہوا ہے۔ اور 80 لاکھ کے لگ بھگ شہری بے گھر ہوئے۔ ’انفراسٹرکچر کی بحالی کےلیے بڑے پیمانے پر اقدامات اور امداد کی ضرورت ہے۔‘
پاکستان کے وزیراعظم شہباز شریف نے کانفرنس سے خطاب میں کہا کہ اُن کا ملک اس مشکل وقت میں ساتھ دینے والے ملکوں کو ہمیشہ یاد رکھے گا۔
انہوں نے کہا کہ سیلاب سے کاشت کاری کو نقصان پہنچا جس سے غذائی قلت کے بحران نے جنم لیا۔
کانفرس سے فرانس کے صدر ایمانویل میکخواں نے بھی ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب کیا۔
انہوں نے کہا کہ فرانس نے فوری طور پر 10 ملین ڈالر کی امداد کے ذریعے سیلاب متاثرین کی بحالی کی کوششوں میں حصہ لیا۔ اور اب بھی عالمی برادری کے ساتھ مل کر پاکستان کے متاثرین کی بحالی کی کوششوں میں شریک ہیں۔
ترک صدر رجب طیب اردوغان نے اپنے ویڈیو لنک خطاب میں کہا کہ اُن کا ملک اس مشکل وقت میں پاکستان کے ساتھ کھڑا ہے۔
پاکستان کے وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری نے اس موقع پر کہا کہ سیلاب کے پانچ ماہ بعد بھی ملک کے کئی علاقے زیرِ آب ہیں۔ ’ہر سات میں سے ایک پاکستانی سیلاب سے متاثر ہے۔‘
ان کا کہنا تھا کہ تعمیر نو کے اقدامات تاحال جاری ہیں۔ لکچدار انفراسٹرکچر کی تعمیر پہلی ترجیح ہے۔ آئندہ قدرتی آفات سے بچنے کے لیے پاکستان نے ایک پالیسی فرم ورک بنایا ہے۔
برطانوی خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق یہ کانفرنس اس بات کا بھی امتحان ہے کہ ماحولیاتی تبدیلیوں سے ہونے والے تباہی کے بعد تعمیرنو کے لیے رقم کون دے گا۔
گذشتہ سال پاکستان میں ریکارڈ مون سون بارشوں اور گلیشیئرز پگھلنے سے آنے والی سیلابوں کے سبب 80 لاکھ سے زائد لوگ بے گھر اور 0017 سے زائد ہلاک ہوگئے تھے۔ ماہرین کے مطابق یہ سیلاب ماحولیاتی تبدیلیوں کا شاخسانہ تھا۔





Source link

RELATED ARTICLES

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular

Recent Comments